• بلاگ
  • صفحہ اول

میں ہمیشہ سچ بولوں گا ، موجودہ سیاسی صورتحال پر جامع تبصرہ

صفحہ اول بلاگ میں ہمیشہ سچ بولوں گا ، موجودہ سیاسی صورتحال پر جامع تبصرہ

میں ہمیشہ سچ بولوں گا ، موجودہ سیاسی صورتحال پر جامع تبصرہ

- Advertisement -

عنوان : میں ہمیشہ سچ بولوں گا ۔
تحریر : محمد عمران ملک

ایک بچہ اپنے علم اور قد سے زیادہ باتیں کرتا تھا ِ   اس کی اس خوبی نے اس کے والد کو بہت متاثر کیا ِ اس کے باپ نے اس کے بارے میں پیشن گوئی کی کہ وہ بڑا ہو کر سیاستدان بنے گا ِ بچے کی ماں اس بات پر حیران ہوئی اور اس نے اپنے میاں سے بچے کے بارے میں اس پیشن گوئی کی وجہ پوچھی کہ وہ کیسے وثوق سے کہ سکتا ہے کہ ان کا بیٹا سیاستدان بنے گا؟ تو اس کے میاں نے جواب دیا کہ ہمارے بیٹے کی باتیں کانوں کو اچھی تو لگتی ہیں مگر یہ ہوا میں قلعے بنانے کے مترداف ہیں ِ

- Advertisement -

سیاست کو دنیا بھر میں عبادت کا درجہ دیا جاتا ہے ِ ِبدقسمتی سے ہمارے معاشرے میں سیاست کو دھوکہ دہی کامترادف سمجھا جانے لگا ہے ِ اس کی بڑی وجہ عوام کو سبز باغ دکھانےوالے ہمارے سیاستدان ہیں ِ جھوٹ بولنا سیاست کا بنیادی حصہ بن چکا ہے ِ اس عمل نے نظام کی تباہی میں دیمک کا کردار ادا کیا ہے ِ آج عوام کا سیاستدانوں اور نظام سے اعتماد اٹھ چکا ہے ِ

اللہ پاک نے قرآن مجید میں جھوٹوں پر لعنت بھیجی ہے ِ آخرالزمان حضرت محمد کا ارشاد گرامی ہے کہ قیامت کے روز ان کی امت میں جھوٹے نہیں اٹھائے جائیں گے ِ کئی امتوں کی  بربادی کی وجہ جھوٹ بولنا تھا ِ زمانہ جاہلیت میں بھی لوگ زبان کا پاس رکھتے تھے ِ مگر بدقسمتی سے ہمارے معاشرے میں جھوٹے شخص کو مکار اور دھوکہ باز کہنے کی بجائے ہوشیار اور سمجھدار سمجھا جانے لگا ہے ِ اخلاقیات کا جنازہ تو اس حد تک نکل چکا ہے کہ ہمارے سامنے کوئی شخص اگر جھوٹ بولے تو ہم نہ اسے روکتے ہیں بلکہ کئی بار تو اس کی چالبازی کی داد بھی دیتے ہیں ِ

حکمرانوں کا طرز بیان اور رہن سہن کا عام عوام پر گہرا اثر پڑتا ہے ِ انتخابات کے موقع پر ہر جلسے میں عوام کی خدمت کے وعدے کرنے کا عمل ہر جماعت اور سیاستدان خوب نبھاتے ہیں مگر انتخابات میں کامیابی کے بعد تمام وعدے مصلحتوں کا شکار ہو جاتے ہیں اور عوام سے کیے گئے تمام وعدے ہوا ہو جاتے ہیں ِ پھر سیاست نظریے کی بجائے جھوٹ کا دوسرا نام بن جاتی ہے ِ سیاسی مصلحتیں عوامی خدمت کی بجائے ذاتی مفادات کی چادر اوڑھ لیتی ہیں اورسیاست عبادت کی بجائے منافقت کا دوسرا نام بن جاتی ہے ِ

پاکستان میں جمہوریت کے نام پر جو وعدہ خلافی کا کھلواڑ عوام کے ساتھ کھیلا گیا یا کھیلا جا رہا ہے وہ جمہوریت کی ہر گز خدمت کے زمرے میں نہیں آتا ِ ہمارے رہنما اپنےحقوق کا تحفظ تو کرتے ہیں مگر عوام کو ہمیشہ حقوق کے نام پر دھوکہ دیا جاتا ہے ِ کبھی پاکستان کو ایشیا ٹائیگر تو کبھی ریاست مدینہ کا لولی پاپ دیا جاتا ہے ِ کبھی قوم پرستی کے نام پر تو کبھی مذہبی فرقہ وارئیت کے نام پر قوم کو تقسیم کیا جاتا ہے ِ کبھی ملک میں نظام مصطفی تو کبھی سوشلزم کا نعرہ سنایا جاتا ہے ِ ان تمام نعروں ‘ وعدوں اور تحریکوں میں عوام کو ماموں  بنا کر ان کے حقوق ہمیشہ سلب کیے جاتے ہیں ِ ہمارے رہنماووں کے دعوے اقتدرار کی منزل حاصل کرنے تک ہی زوروشور سے جاری رہتے ہیں ِ سابق صدرآصف علی زرداری صاحب نے ایک دفعہ ان تمام دعووں کی حقیقت کچھ یوں بیان کی تھی کہ وعدے کوئی حدیث ہوتے ہیں ِ ان کے اس بیان پر بہت زیادہ تنقید کی گئی مگر انہوں نے سیاسی وعدوں کی حقیقت کو عوام کے سامنے لایا جو ہماروں رہنماووں کی سیاسی  چالبازی اوربصیرت کا بنیادی حصہ بن چکا ہے ِ

پی پی پی ‘ نواز لیگ سمیت تمام بڑی اورچھوٹی سیاسی و مذہبی جماعتوں نے عوام سے بلند و بانگ  دعوےاور وعدے کر کے اقتدار حاصل کیا ِ عوام نے ان کی باتوں پر ہمیشہ یقین کیا مگر ان تمام جماعتوں نے عوام سے کیےگئے وعدے اقتدار حاصل کرنے کے  بعد بھلا دیے ِ وزیر اعظم عمران خان کی جماعت کو اقتدار بھی بلند و بانگ دعوں کی بنیاد پر ملا ِ  عمران خان صاحب نے 23 مارچ 2013 کو مینار پاکستان کے مقام پر عوامی جلسے میں سب سے بڑا دعوی یہ کیا تھا کہ انہوں نے اللہ سے وعدہ کیا ہے کہ اپنی قوم سے ہمیشہ سچ بولیں گے ِ ان کے یہ الفاظ آج  بھی کانوں میں گونج رہے ہیں ” میں ہمیشہ سچ بولوں گا ِ” وزیر اعظم عمران خان نہ صرف پاکستان بلکہ عاللمی سطح پر اچھی شہرت اور مین آف کمنٹمنٹ کے طور پر جانے جاتے ہیں ِ اقتدار حاصل کرنے کے بعد عمران خان صاحب نے یو ٹرن پالیسی اپنائی ہے ِ اس میں کوئی شک نہیں کہ کبھی کبھار ملکی اور عوامی مفاد کے لیے یوٹرن لینا  زیادہ بہتر ہوتا ہے بجائے کسی معاملے کو ضد اور انا کا مسئلہ بنایا جائے ِ مگر ہر معاملے پر یوٹرن لینا کیا عوام کااعتماد مجروح کرنے کے مترادف نہیں ہے ؟

وزیر اعظم عمران خان صاحب قوم نے آپ کی باتوں پر یقین کیا ہے ِ بڑی بڑی باتوں سے قوم کا پیٹ نہیں بھرتا ِوعدوں کو جب تک آپ پورا نہیں کریں گےتو صبر کے درس عوام ستر سال سے سن رہے ہیں ِ قوم آپ کی سچائی کا عملی ثبوت دیکھنا چاہتی ہے ِ ِتاریخ کا کوڑا دان جھوٹے وعدوں اور دعوں سے بھرا پڑا ہے ِ قوم کو سچ سے آگاہ کریں ِ قوم نے آپ پر اعتماد کیااور آپ کو وزیراعظم منتخب کیا ِ عوام کی عدالت کا فیصلہ آنے سے پہلے ان سے کیے گئے وعدے پورے کریں ِ عوام کو اعتماد میں لیں ِ اپنے وعدوں کی تکمیل کی حکمت عملی سے انہیں آگاہ کریں اور سیاست کو عبادت کا درجہ واپس دلائیں ِ آپ ریاست مدینہ کے دعویدار ہیں تو یاد رکھیں اگر آپ کی قوم مومن بن گئی تو مومن دو بار ایک سوراخ سے نہیں ڈسا جاتا ِ

- Advertisement -
adminhttp://news2daypk.com
I'm a manager at News Today Pk and my primary responsibilities are making major corporate decisions and managing the overall operations and resources of the company. I’ve done Master in Mass Communication and now I’m performing my job as a News Anchor. I’m also hire on assistant director post at Motion Circle.

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں
اپنا نام یہاں درج کریں

1,000فینزپسند
5فالورزفالور
1,000فالورزفالور
1,000سبسکرائبرزسبسکرائب کریں